رکن یا ارکان کسے کہتے ہیں؟

رکن یا ارکان کسے کہتے ہیں؟

رکن یا ارکان کسے کہتے ہیں؟رکن یا ارکان کسے کہتے ہیں؟
اجزائے ثانی یعنی سبب اور وتد یا سبب وتد اور فاصلہ کی مختلف ترتیبوں سے جو لفظ یا مرکب تشکیل پاتا ہے،اسے رکن کہتے ہیں۔رکن کی جمع ارکان ہے۔ ارکان کوافاعیل ،تفاعیل ،اجزا،میزان اوراصول بھی کہا جاتا ہے ۔بحر انھیں ارکان میں سے کسی ایک رکن کی تکرار سے یاایک سے زائدارکان کے باہم مرکب ہونے سے وجود میں آتی ہے۔
ٓسبب: دو حروف کے ملنے سے جو لفظ بنتا ہے ،اسے سبب کہتے ہیں۔سبب کی دو قسمیں ہیں ۱۔سببِ خفیف اور۲۔سببِ ثقیل

سببِ خفیف (+-) : وہ دو حرفی لفظ جس کا پہلا حرف متحرک اور دوسرا ساکن ہو اسے سببِ خفیف کہتے ہیں۔ مثلاً۔دن،شب،دل ،گل وغیرہ ۔

سببِ خفیف کو ہندی عروض میں ’گروورن’ یعنی بڑا رکنیہ کہتے ہیں۔

سببِ ثقیل(++) :سببِ ثقیل اس دو حرفی لفظ کو کہتے ہیں جس کے دونوں حروف متحرک ہوں۔ مثلاً شبِ غم ،سرِبزم میں شبِ اور سرِ سبب ثقیل ہیں۔بہت سی دوسری زبانوں کی طرح اردو میں بھی متحرک الآخر حروف نہیں ہیں ۔اس لیے اردو میں سببِ ثقیل صرف اضافت کے سبب ممکن ہے ۔
ہندی عروض میں واحد متحرک حرف کو’لگھوورن‘ کہتے ہیں۔ دولگھوورن کو سببِ ثقیل کہا جائے گا
وتد : سہ حرفی لفظ کو وتد کہتے ہیں۔یہ تین قسم کا ہوتا ہے۔وتدِ مجموع ، وتدِ مفروق اور وتدِ موقوف

وتدِ مجموع(++-) : وہ تین حرفی لفظ جس کے ابتدائی دوحروف متحرک اور تیسرا ساکن ہو ،اسے وتد مجموع کہتے ہیں۔مثلاً خدا،فلک ،نظراورقدم وغیرہ۔اسے وتدِ مقرون بھی کہتے ہیں۔

وتدِ مفروق(+-+) : وہ تین حرفی لفظ جس کا پہلا اور آخری حرف متحرک اور درمیانی حرف ساکن ہو ،اسے وتدِ مفروق کہتے ہیں۔مثلاً شامِ غم ،جانِ جاں اورصبحِ وطن میں شامِ ،جانِ اور صبحِ وتد مفروق ہیں۔وتدمفروق اردو میں ہمیشہ اضافت کے سبب ممکن ہے ورنہ نہیں۔

وتدِ موقوف(+–): وہ تین حرفی لفظ جس کے آخری دونوں حروف ساکن ہوں،اسے وتدِ موقوف کہتے ہیں۔مثلاًنام،دام،شرط،شرم ،عزم اورفاعْ وغیرہوتد کثرت : وہ چہار حرفی لفظ جس کے شروع کے دونوں حروف متحرک اورآخرکے دونوں حروف ساکن ہوں ،اسے وتد کثرت کہتے ہیں۔مثلاً جہاں ،نہاں،بہاراور قرار وغیرہ

فاصلۂ صغرا (+++-) وہ چہار حرفی لفظ جس کے شروع کے تین حروف متحرک اور چوتھاحرف ساکن ہوتو ایسے لفظ کو فاصلۂ صغرا کہتے ہیں۔مثلاً شِکَنِی،بَدَنِی،سُخَنے اورفَعِلُن وغیرہ
فاصلۂ صغراسببِ ثقیل اور سببِ خفیف سے مرکب ہے۔

 in Hindi / Sanskrit > Two Laghu warn (II) =  سببِ ثقیل

in Hindi / Sanskrit > Guru Warn (S) = سببِ خفیف

اپنا تبصرہ بھیجیں